JoomlaLock.com All4Share.net
Fusus al-Hikam

Author: Shaykh al-Akbar Muhyiddin Ibn al-Arabi

Editor: Abd al-Aziz Sultan al-Mansub, Abrar Ahmed Shahī

Translated by: Abrar Ahmed Shahi

Price Rs 1399/- Int'l US $ 50.

Pages: 664

ISBN: 9789699305085

Dimensions: 255 × 165 mm

Edition: 1st. April 2015

Made possible with a grant from TIMA

in stock

Read online and Purchase

Fusus al-Hikam Final Report

Muhyiddin Ibn 'Arabi considered the Fusûs al-Hikam, his last major opus, to be the most important of his more than 350 books. The theme is the inner meaning of the 27 prophets mentioned in the Quran from Adam to Muhammad: the infinite wisdom which is at once unique in itself and many-faceted in its representation. The Fusûs is simultaneously an explanation of the most profound meaning of man's existence and perfectibility and an esoteric exegesis of the Quran.
Ibn 'Arabi says in the preface of this book:

I saw the Envoy of God (may God bless him and give him peace) in a dream-vision of good news (mubashshira), which I had in the last 10 days of Muḥarram in the year 627H in the city of Damascus: in his hand was a book, and he said to me: “This is the book of the Fuṣūṣ al-ḥikam, take it and bring it out to people who will benefit from it.” I replied: “Hearing and obedience are due to God, His messenger and the people entrusted with authority amongst us, as we have been ordered”...  I communicate nothing that has not been communicated to me, nor do I reveal in these lines anything but what has been revealed to me. I am neither a prophet nor a messenger: I am but an heir, one who labours for the good of the other world.

It is from God, so listen! And it is to God, so return!

  When you have heard what He has given to you, become aware

Then with understanding, distinguish all the details of the whole and bring it together

 Then bestow it upon the one who seeks it – do not withhold it!

This is the Mercy which has extended over you – so extend it!


The Fusus al-Hikam is one of the most precious short writings of our Shaykh... One of the last and most complete book sent down upon him, it came to him from the station of Muhammad, the Fountain head of the Essence, and the unitary All-Comprehensiveness. So it contains the epitome of the spiritual perception (dhawq) of our Prophet - God's blessings be upon him - concerning the Knowledge of Allah. It also points to the source of the spiritual perceptions of the prophets mentioned within it. It leads every man of spiritual insight to the gist of their spiritual perceptions, the objects of their intentions and aspirations, the sum of all they achieved, and the outcome of their perfections. So it is like the seal of everything comprised with in the perfections of each of them; it gives news of the source of what they encompassed and what the made manifest.

Shaykh Saddruddin al-Qunawi in al-Fukuk

 New Critical Arabic Edition

In late 2013 I began my project to critically edit Fusus al-Hikam of Muhyiuddin Ibn al-Arabi (d. 638 AH), relying on seven of the earliest manuscripts that I had obtained from several sources. Three of these manuscripts are received from the archive of Ibn Arabi Society, Oxford. And we have arranged the remaining four from our own archive and from our contacts. Detail of the manuscripts are:

1933001 200x1501- Evkaf Muzesi 1933

Written by Sadruddin Qunawi, with two samāʿ by his hand, dated 630H. This is the best available manuscript of Fusus as it bears Shaykh’s signatures and a samaa. We have made this the base manuscript for our edition.

Page 1a states that this is a riwāya of Sadruddin, certified by Ibn al-Arabi himself: 78a gives full samāʿ.

majlis shura front 135x2002- Majlis e shura milli Iran

This is the second oldest manuscript in our collection. It clearly says that it has been copied from a manuscript whose katib has read it to the author. Copying date of this mss is 9 Dhū al-Qaʿda 682H.



Shahit Ali 156x200

3- Shehit Ali 1351

A complete copy, with each chapter heading in red and numbered. Page 133b note saying that it was copied “in the town of Quṭbiya in Kirmān… in the middle of Rabiʿ al-awwal 689H.” In bottom right corner states that the text was checked (qūbilat) at the end of Rabiʿal-ākhir.

london 145x2004– London (Private Copy)

Annotated copy with red titling dated 797H (see 105a). There are numerous annotations in the margins, which suggest that the scribe used this as a working copy. Almost every page has some kind of marginal explanation. This makes it a historically interesting document in terms of how the Fusus al-Hikam was studied at an early date.

fusus waqf 200x126 5- Awqaf islamiyya 1882

 Copied in the year 815 by the Katib Mustafa bin Sayyadi bin Mustafa bin Sayyadi bin Muhammad. This seems to be a good copy so we have included it to our edition.

fusus khurasani 142x200 6- Fakhr al-din al-Khurasani’s copy

 A collection of more than 60 works of Shaykh al-Akbar copied in the year 814 by an admirer of Shaykh al-Akbar Fakhr al-Din Khurasani in Zubaid Yemen. This whole collection is of very importance, some works bear notes of copying from original but overall we have found it to be a good collection of Ibn al-Arabi’s works.

uni of michigen 7-  University of Michigan, Isl. Ms. 512

 As appears in colophon on p. 276, Fusūs al-Hikam copied by Ahmad ibn Abī al-Khayr known as al-Khawlī with transcription completed 23 Dhū al-Hijjah 1017 [ca. 30 March 1609]. As appears in colophon on p.294, final work executed by the same copyist with transcription completed in the latter part of the year 1017 [1609].

.
TIMA grant logo

قراءة في كتاب: فصوص الحكم وخصوص الكلم

يعتبر كتاب "فصوص الحكم" أحد أكثر مؤلفات الشيخ الأكبر محيي الدين بن العربي أهمّية بعد "الفتوحات المكية"؛ فتأليفه جرى بعد وصول صاحبه إلى قمة أدائه، إذ كان في أواخر العقد السابع من عمره، ومادته متصلة بأفضل عباد الله لنا، وهم الأنبياء عليهم السلام، لغرض معرفة حكمة ظهورهم، والحِكم المودعة في كل منهم، وفيما جرى معهم من أحداث وظهر عنهم من مواقف وأقوال.
كانت العبارة الأولى للشيخ الأكبر في هذا الكتاب - بعد الاستفتاح بحمد الله والصلاة على رسوله - هي: "رأيتُ رسول الله صلى الله عليه وسلم في مبشّرة أُريتها في العشر الآخر من المحرم سنة سبع وعشرين وستمائة، بمحروسة دمشق، وبيده ﷺ كتاب فقال لي: هذا كتاب "فصوص الحِكم" خذه واخرج به إلى الناس ينتفعون به. فقلت: السمع والطاعة لله ولرسوله وأولي الأمر منّا كما أُمرنا. فحقّقتُ الأمنيّة، وأخلصتُ النيّة، وجرّدتُ القصد والهمّة إلى إبراز هذا الكتاب كما حدّه لي رسول الله ﷺ من غير زيادة ولا نقصان". واستُقبل الكتاب بترحاب كبير من شيوخ وأئمة التصوّف في مختلف بلاد المسلمين، واندفع الكثيرون منهم إلى كتابة شروحات له فاقت المائة والعشرين شرحا وبلغات عديدة.
أثارت تلك العبارة الاستهلالية للشيخ الأكبر، وذلك الأفق الواسع الذي تفرّد كاتبنا في التحليق فيه، والاهتمام الكبير الذي استقبل به الكتاب - فيما بعد - غيرة واسعة لدى فريق من علماء المسلمين معروف بمواقفه المعارضة للتصوف، واندفعوا للبحث في الكتاب عن كلمة هنا وعبارة هناك يخرجونها من إطارها لغرض هدمه، على طريقة "ولا تقربوا الصلاة"، بل لقد اندفع بعضهم إلى تغيير رسم بعض كلمات للشيخ الأكبر، ليصل بهم الأمر إلى محاولة إدانته وإقرار خروجه عن أحكام العقيدة.. إلخ . وغاب عن هؤلاء أنّ الشيخ الأكبر كان قد ألّف مئات الكتب وجميعها تتفق في المنهج والنتائج ومن بينها هذا الكتاب، وجميعها ملتزمة بالقواعد الشرعية الإسلامية، ورجوعها دوما للنص القرآني والحديث النبوي انطلاقا من قوله تعالى: ﴿كِتَابٌ أَنْزَلْنَاهُ إِلَيْكَ مُبَارَكٌ لِيَدَّبَّرُوا آيَاتِهِ وَلِيَتَذَكَّرَ أُولُو الْأَلْبَابِ﴾ (ص:29) وقوله: ﴿أَفَلَا يَتَدَبَّرُونَ الْقُرْآنَ أَمْ عَلَى قُلُوبٍ أَقْفَالُهَا﴾ (محمد:24)، ويصعب - من ثمّ - قبول المنهج الحاكم بصواب معتقدات الشيخ الأكبر في كلّ مؤلفاته، ورفضها هنا لمجرد انزعاجهم من قوله باختيار رسول الله له - في مبشرة رآها - لتأليف هذا الكتاب. كما غاب عنهم أنّ عددا مهمّا من هذه النصوص بخط صاحبها ستبقى محفوظة إلى يومنا هذا، وستكشف - من ثمّ - التغييرات في رسم الكلمات التي نسبوها كذبا وزورا للشيخ الأكبر.
وفي الواقع لم يكن هذا الأمر مستغربا من مثل هؤلاء، فإنّ كثيرا من علماء الأمم السابقة كان لهم مثل هذا الموقف ليس فقط مع المصلحين في أزمانهم بل حتى مع أنبيائهم، وكانوا في قيادة المعارضة لهم عند ظهورهم. ولطالما أعاد الشيخ الأكبر مثل هذا التصرّف إلى الحسد البشري الذي يلمّ بمن يتصدرون مجالس العلم حين يروا اختيار الله لمن يعتبرونهم أقلّ شأنا منهم، سواء في جانب المال أو الوجاهة والزعامة الآنية الظاهرة، ولذلك عرّض القرآن بهم عند قولهم في معرض استنكارهم دعوة الرسول ﷺ: ﴿لَوْلَا نُزِّلَ هَذَا الْقُرْآنُ عَلَى رَجُلٍ مِنَ الْقَرْيَتَيْنِ عَظِيمٍ﴾ (الزخرف: 31) وردّ عليهم بقوله تعالى: ﴿أَهُمْ يَقْسِمُونَ رَحْمَتَ رَبِّكَ نَحْنُ قَسَمْنَا بَيْنَهُمْ مَعِيشَتَهُمْ فِي الْحَيَاةِ الدُّنْيَا وَرَفَعْنَا بَعْضَهُمْ فَوْقَ بَعْضٍ دَرَجَاتٍ﴾ (الزخرف: 32). كما لا يخفى أنّ دعوة عيسى عليه السلام مثلا قد وجهت من علماء بني إسرائيل بضراوة لا نظير لها.
واللافت للنظر هنا أنّ بعضا من علماء الفلسفة، ممن لهم نظرة إيجابية تجاه الشيخ الأكبر دفعوا - في العصر الحديث - إلى تأكيد مثل تلك القناعات السلبية من خلال تفسير بعض عبارات للشيخ الأكبر بشكل خاطئ يؤدي في نهاية المطاف إلى دعم أقوال المناوئين الذين يعتبرون هؤلاء حجة عليه. ولم يتنبّه هؤلاء إلى أنّ الشيخ الأكبر كان كثيرا ما يفرّق بين مجموعتين: "أهل الفكر أو أهل النظر"، ومن بين هؤلاء الفلاسفة، و"أهل الكشف"، ويرى أنّ لكلّ منهما مجالا. فإذا حاول أهل الفكر الدخول في العلم الخاص بأهل الكشف لفهمه وتفسيره خبطوا خبط عشواء، وأتوا بما لم يقصده صاحبه. والمتتبع للتفسيرات التي أخطأ هؤلاء الفلاسفة في فهمها عن ابن العربي سيجدها من صنف العلوم الخاصة بأهل الكشف، وهو المتعلق بالإلهيّات. يقول الشيخ الأكبر: "والفيلسوف معناه محبُّ الحكمة؛ لأنّ سوفيا باللسان اليوناني هي الحكمة، وقيل: هي المحبّة. فالفلسفة معناه: حُبُّ الحكمة. وكلّ عاقل يحبّ الحكمة، غير أنّ أهل الفكر خطؤهم في الإلهيّات أكثر من إصابتهم، سواء كان فيلسوفا أو معتزليّا أو أشعريّا أو ما كان من أصناف أهل النظر" .
كما أنّ هناك بعض العبارات التي يمكن أن تدفع بقارئها إلى الفهم المغلوط إن لم يحترز في قراءته فتقوده إلى خطأ تفسير كلام الشيخ. وسنورد هنا مثالا لذلك. يقول الشيخ ابن العربي في تعريفه لمعنى الخيال: "وإذا كان الأمر على ما ذكرته لك، فالعالَم متوهَّمٌ ما له وجود حقيقيّ. وهذا معنى الخيال، أي خيّل لك أنّه أمر زائد قائم بنفسه خارج عن الحقّ، وليس كذلك في نفس الأمر" . فهو هنا يقرر بداية أنّ "العالم متوهّم ما له وجود حقيقي" ولا شكّ أنّ القارئ سيصدم بهذه النتيجة، لكنّه من حسن الحظ سيجد مباشرة هنا توضيح ما قصده بتعبير "الوجود الحقيقي" بأنه "وجوده القائم بنفسه"؛ إذ هو قائم بغيره، وهو الحقّ. ومثل هذا التوضيح لا يوجد بالضرورة دائما بعد كلّ عبارة غامضة، ولكنه بالتأكيد موجود في مواضع أخرى في الكتاب؛ فلا يلزم أن يذكر الكاتب الضوابط في كل مرة يورد فيها تعبيرا معيّنا. بل إنّ الشيخ الأكبر قد وضح هذا الأمر بقوله في موضع آخر: "فإذا سمعتَ أحدًا من أهل الله - تعالى - يقول، أو يُنقل إليك عنه، أنّه قال: "الولاية أعلى من النبوّة" فليس يريد ذلك القائل إلّا ما ذكرناه. أو يقول: "إنّ الوليّ فوق النبيّ والرسول" فإنّه يعني بذلك في شخص واحد؛ وهو أنّ الرسول ﷺ من حيث هو وليّ أتمّ منه من حيث هو نبيّ ورسول، لا أنّ الوليّ التابعَ له أعلى منه، فإنّ التابعَ لا يدرِك المتبوع أبدًا فيما هو تابع له فيه؛ إذ لو أدركه لم يكن تابعًا فافهم" . واللافت للنظر أنّ هذه القضية واحدة مما أخذها عليه معارضوه مع تجاهلهم التام لتوضيحه هذا!
هذا الحكم يسري على كل المؤلفين من غير استثناء، فلو سار الباحثون بمثل هذا المنهج لما سلم أحد. لذلك فإنّ الأمر يتطلب دائما حسن الظنّ، وخاصة إذا ما وجدنا كتابا يتضمن عشرات الآلاف من الكلمات والعبارات المستقيمة وبجانبها كلمة أو عبارة لم نستوعب معناها ودلالتها، فلا يصح تغليب سوء الظن بسبب ذلك، ناهيك عن إصدار حكم قاطع ضد صاحبها؛ فلربما كان الخطأ ناجما عن الاستعداد الضعيف للقارئ نفسه، أو بسبب أخطاء النقل أو الطباعة.. إلخ.
ونضيف اليوم فريقا آخر يساعد في تعزيز الصورة السلبية تجاه شيخنا الجليل - وإن من غير قصد - وهذا الفريق هو من يقوم الآن بطباعة كتبه من غير تحقيق دقيق، ربما بهدف الربح المادي فقط، فينشر للقراء أخطاء ما أنزل الله بها من سلطان، ولم تصدر عن الشيخ الأكبر، ولذلك فإنّ الحرص على تحقيق كتبه بأقصى معايير الدقة، والاعتماد على نسخه المكتوبة بخط يده، أو تلك الأقرب إلى عهده إن لم تتوفر الأولى، هو ما ينبغي أن يحرص عليه الباحثون والمهتمون.
ونختم كلامنا بنصيحةٍ وطلبِ أن يستحضر الباحث والقارئ في نفسه دعاء الشيخ الأكبر، إذ قال عند عزمه تأليف هذا الكتاب: "ومن الله أرجو أن أكون ممن أُيِّد فتأيّد وأيَّد، وقيِّد بالشرع المحمدي المطهّر فتقيَّد وقيَّد، وحَشَرنا في زمرته" ليعرف أنّ مثل هذا القول لا يصدر إلا من قلب ملئ بالإيمان والحب والالتزام بالشرع المحمدي المطهر، ويستحق كلّ الاحترام والتعظيم والمحبّة.

عبد العزيز سلطان المنصوب

فصوص الحكم

فصوص الحکم شیخ اکبر کی اہم ترین کتابوں میں سے ایک کتاب ہے۔ یہ ایک مبارک خواب کی صورت میں آپ کو دی گئی۔ اس خواب کے بارے میں شیخ فصوص کے مقدمے میں لکھتے ہیں:

"میں نے ایک بشارت دینے والے خواب میں نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم کا دیدار کیا، یہ خواب مجھے سن 627 ھ اخیر عشرہ محرم، شہر دمشق میں دکھلایا گیا۔ آپؐ کے ہاتھ میں ایک کتاب تھی، مجھے بولے: “یہ کتاب فصوص الحکم ہے، اسے پکڑو اور لوگوں تک پہنچاؤ تاکہ وہ اِس سے فائدہ اٹھائیں۔” میں نے کہا: جیسا ہمیں حکم دیا گیا ہے ہماری کامل فرمانبرداری اللہ، اُس کے رسول اور وقت کے حاکموں کے لیے ہے۔ سو میں نے اِس خواہش کو پورا کیا، نیت کو خالص کیا، اور اپنی توجہ اور مقصد اِس کتاب کو کسی کمی بیشی کے بغیر ویسے منظر عام پر لانا بنا لیا جیسا کہ مجھے رسول اللہ صلى الله عليه وسلم نے کہا۔"

اب جبکہ اس کتاب کی نسبت نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم کی جانب ہے تو پھر احتیاط کا تقاضا یہی تھا کہ اس کو منظر عام پر لانے کے لیے حتی الامکان احتیاط سے کام لیا جاتا۔ اس بارے میں شیخ فرماتے ہیں:

"پھر میں نے اللہ سے یہ دعا مانگی کہ اِس (کتاب کے) معاملے میں، بلکہ میرے تمام احوال میں مجھے اپنے ان بندوں میں شامل کر لے کہ جن پر شیطان کا کوئی زور نہیں، اور جو کچھ میری انگلیاں لکھیں، میری زبان بولے، یا میرے دل میں آئے؛ عیب سے منزّہ القا کی صورت، یا نفسی شعور میں روحی الہام کی مانند، تو اِس سب میں مجھے اُس (تائید خدائی) سے مخصوص کر کہ میں اِس (القا اور الہام) کو گرفت میں لے سکوں؛ تاکہ میں (رسول خدا کا) ترجمان بنوں اور اپنی ذات سے اِس میں تصرف نہ کروں۔"

اور فرمایا: "جب اللہ تعالی نے مجھے باطنی طور پر اُن باتوں پر مطلع کیا جو اِس امام اور والد اکبر میں ودیعت کی گئیں، تو میں نے اِس کتاب میں اِن میں سے وہی کچھ ذکر کیا جس کی مجھے اجازت دی گئی، نہ وہ کہ جن پر میں مطلع ہوا؛ کیونکہ یہ کتاب اور آج کا یہ عالم اِن (اسرار) کا احاطہ نہیں کر سکتا۔ پس جس کا میں نے مشاہدہ کیا اور جو میں اِس کتاب میں لکھوں گا وہ اسی قدر ہو گا جس قدر رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے مجھے لکھنے کا حکم دیا۔"

اِن عبارات سے واضح ہے کہ شیخ بھی اس کتاب کو لکھنے میں رسول اللہ کے ترجمان ہیں نہ کہ مولف۔ آپ کو انہی دقتوں کا سامنا ہے جو ایک مترجم کو ہوتا ہے۔ اس کتاب کی عبارات بھی اسی بات کی غماز ہیں اور یہی تو مولف اور مترجم کا فرق ہے۔ اور اس کتاب کے مشکل ہونے کی ایک وجہ یہ بھی ہے کہ یہ ایک ترجمہ ہے۔

ہمارا ترجمہ

جب ہم نے ترجمہ شروع کیا تو وہ نہایت تکلیف دہ عمل تھا، کتاب کی عبارات نہایت دقیق اور عمیق ہیں اور کوئی مترجم اسی وقت ان کا کماحقہ ترجمہ کر سکتا ہے جب تک کہ باطنی امداد کی صورت میں معانی کا فہم اس کی رہنمائی کرے۔ اس سلسلے میں میں ان تمام شارحین فصوص اور مترجمین کا بھی خصوصی شکریہ ادا کرنا چاہوں گا کہ جن کی شرح اور ترجمے نے مشکل مقامات پر مجھے انحراف سے بچائے رکھا۔ ان میں شرح بالی آفندی، شرح داؤد القیصری، شرح المہائمی اور شرح الجامی اہم ہیں، شرح عبد الغنی النابلسی نے بھی بہت سہارا دیا۔ ایک دفعہ مکمل ترجمہ کر لینے اور ابتدائی پروف کے بعد بھی اردو ترجمے کو دوبارہ عربی متن سے ملا کر چیک کیا گیا۔ عموماً ہم کتاب کو دو مرتبہ ترجمہ کرتے ہیں کیونکہ اس نظر ثانی سے کتاب کافی حد اصل متن کے قریب ہو جاتی ہے، پہلی مرتبہ بعض اوقات ترجمے میں نقائص رہ جاتے ہیں جن کا ازالہ مکمل نظر ثانی سے ہی ممکن ہوتا ہے۔ شروع سے لے کر آخر تک مکمل کتاب عربی متن سے دوبارہ چیک کی گئی، شرح میں بھی مشکل مقامات مزید آسان کیے گئے۔ جو عربی عبارات پھر بھی سمجھ سے بالاتر رہیں انہیں عبد العزیز المنصوب کو بھیجا گیا تاکہ وہ ان مقامات کی شرح کر دیں اور ہم اِسے سمجھ کر آسان زبان میں ترجمہ کر لیں۔ اس محبت اور محنت کے باوجود بھی اگر کوئی کمی یا کوتاہی رہ گئی ہو، یا ہم نے عربی متن ویسے پیش نہ کیا ہو جیسا کہ شیخ کی مراد تھی تو ہم ان سے معافی کے خواستگار ہیں۔ قارئین سے بھی یہ گزارش ہے کہ وہ اگر کہیں لفظی یا معنوی غلطی پائیں تو ہمیں آگاہ کریں تاکہ اگلے ایڈیشن میں اسے ٹھیک کر دیا جائے۔

حواشی اور شرح

ہم نے اوپر ان کتابوں کے نام لکھے ہیں جن سے اس کتاب کے حواشی میں مدد لی گئی۔ شارحین فصوص کی بات ہو جائے تو جن شارحین کا انتخاب میں نے کیا وہ سب ایک ہی ترتیب میں چلتے دکھائی دیتے ہیں۔ شیخ داؤد القیصری کی شرح اکثر شارحین کے نزدیک کلاسیک کا درجہ رکھتی ہے، اور اس کی ایک بڑی وجہ تو یہ ہے کہ خود شیخ اکبر کے ہاں سے اِسے مقبولیت عطا ہوئی۔ شرح داؤد القیصری فصوص الحکم کو سمجھنے کی مفتاح ہے جو ہر درجے کے قاری کے ذوق کی تسکین کرتی ہے۔ اس کے بعد ہم نے شیخ بالی آفندی کی شرح سے بہت استفادہ حاصل کیا ہے۔ پھر شرح جامی اور شرح شیخ المہائمی اور آخر میں شرح عبد الغنی النابلسی۔ کتاب کے حواشی کے سلسلے میں ہم نے شیخ اکبر کے دیگر کلام خاص طور پر فتوحات مکیہ سے بھرپور استفادہ کیا ہے۔ ہم نے اِس کتاب کے مشکل مفاہیم کو سامنے رکھا اور پھر موضوع کی مناسبت سے جو کچھ ہمیں اللہ کی توفیق سے سمجھ آیا یا جس عبارت تک ہماری رہنمائی کی گئی ہم نے اُسے حاشیے میں نقل کر دیا۔ اس عمل کا بنیادی مقصد یہی تھا کہ وہ لوگ – جن میں ہم بھی شامل ہیں – جو ان مفاہیم سے واقف نہیں وہ کسی حد تک ان سے واقف ہو جائیں اور اُن پر اِن کا سمجھنا آسان ہو، حالانکہ نہ یہ مفاہیم آسان ہیں اور نہ ہی وہ انداز جس میں انہیں بیان کیا گیا ہے۔

اشاعتی معیار

ہم آپ حضرات کو یہ یقین دہانی بھی کروانا چاہتے ہیں کہ آپ کے ہاتھوں میں موجود یہ ایڈیشن اس وقت روئے زمین پر اِس کتاب کا بہترین؛ قدیمی مخطوطات سے اخذ شدہ مستند ترین اور مصدّقہ ایڈیشن ہے۔ ہم نے عبارت کو اشاعت کے بنیادی اصولوں سے مزین کر کے شائع کیا ہے جو کہ مندرجہ ذیل ہیں:
1. عربی عبارت میں موجود تمام قرآنی آیات کی تخریج کی گئی ہے۔
2. کتاب کا مکمل عربی متن دیا گیا ہے تاکہ وہ حضرات جو اردو نہیں جانتے اور عربی متن تک رسائی حاصل کرنا چاہتے ہیں اُن کے لیے آسانی ہو۔
3. کتاب کا ترجمہ نہایت سلیس رکھا گیا ہے اور ہر مشکل عربی لفظ کے مقابل اردو لفظ لانے کی کوشش کی گئی ہے، الاّ یہ کہ وہ شیخ اکبر کی اصطلاح ہو۔ اردو ترجمے میں مفاہیم کی روانی اور سلاست پر توجہ دی گئی ہے لیکن بعض ناگزیر وجوہات کی بنا پر مکمل ترجمہ کماحقہ کرنا ممکن نہیں۔ عربی متن ساتھ پیش کرنے کا بنیادی مقصد بھی یہی ہے کہ دلیل پکڑنے کی غرض سے اصل عربی سے رجوع کیا جائے اور ترجمے کو صرف فہم کا ایک ذریعہ سمجھا جائے، بلکہ جو حضرات عربی پڑھنے اور سمجھنے کی صلاحیت رکھتے ہوں انہیں عربی متن ہی پڑھنا چاہیے۔
4. علوم شیخ اکبر کے ترجمے کا حق ادا کرنا تو کسی کے بس کی بات نہیں، ہم نے اپنی سی کوشش کی ہے کہ ترجمہ علوم شیخ اکبر کی عمومی فہم کے مطابق سلیس اور آسان ہو لیکن اگر کسی مقام پر ہم عربی متن اور ترجمے کو شیخ اکبر محی الدین ابن العربی کی مراد کے مطابق پیش نہیں کر سکے تو ہم آپ سے معافی کے خواستگار ہیں۔
5. کتاب کو بڑے سائز پر بہترین صورت میں شائع کیا گیا ہے۔ اشاعتِ کتاب کے سلسلے میں بین الاقوامی معیار کو سامنے رکھا گیا ہے۔ آج ہمیں نہایت خوشی ہو رہی ہے کہ اس پاک ذات نے ہمیں اپنے اس عزم پر عمل پیرا ہونے کی توفیق دی۔ بیشک محض اس کی توفیق اور عطا، اپنے ظاہری اور باطنی شیوخ کی نظر التفات ہی وہ اسباب ہیں کہ ہم اس منزل کو پانے میں کامیاب ہوئے۔

Who are we

Spiritual force behind the Foundation's activities here in Pakistan. Our Shaykh in Qadari Tariqa

Syed Rafaqat Hussain Shah
Shaykh of Qadari Razzaqi tariqa
Ahmed

Shaykh of Tariqa al Akbariiya, our mentor in correct understanding of the Shaykh's teachings.

Shaykh Ahmed Muhammad Ali
Shaykh of Akbariyya Tariqa

Editor, Translator and Ambassador of Shaykh al Akbar. Working full time in the foundation

Abrar Ahmed Shahi
Head at Ibn al Arabi Foundation Pakistan

Proof reader and Urdu language editor, contributing part time on Foundation's activities

Hamesh Gul Malik
Secretary General.