JoomlaLock.com All4Share.net

Author: Shaykh al-Akbar Muhyiddin Ibn al-Arabi

Editor: Abrar Ahmed Shahi, Ahmed Muhammad Ali

Reviewed by: Abd al-Aziz Sultan al-Mansub

Translator: Abrar Ahmed Shahi

Price Rs 999/-Int'l US $ 45.

Pages: 468

ISBN: 9789699305061

Dimensions: 255 × 165 mm

Edition: 2nd. February 2014

in stock

(Arabic Edition)

Tadbirat al-Ilahiyya is one of the earliest literary efforts of Ibn al-'Arabi, the book is modeled on the Secretum secretorum (Sirr al-asrar) of Pseudo-Aristotle, said to have been composed by the Stagirite for his pupil, Alexander the Great, when he could no longer accompany the latter on his campaigns.

It is arranged in twenty-one chapters, treating of the metaphorical correspondences between the mun­dane political hierarchy of amir's and wazir's, katib's and qadi's, on the one hand, and the inner rulership of the spirit within the human being, on the other hand. Several chap­ters deal with military organization and the conduct of war, and one is devoted to the mental and moral nourishment homeo­pathically proper for each season of the year.


 Shaykh al-Akbar Ibn al-Arabi says in this book:

This little book contains vast knowledge of great benefit to all. It is gathered from the gardens of Eden and from Divine Providence. It is meant to be a guide to believers There are neither conjectures not doubts in it. Even if some may find faults in it, they will concede that they are small, fine and beautiful.

The book is divided into twenty-one chapters. Each section contains instructions for achieving unity, the Lord’s gift to humankind. They show how to keep order within the divine order while improving ourselves; how to guide our lives in the right way; how to protect His kingdom, which is the human being, from oblivion; how to rule it in the way that it is meant to be ruled, by the soul that the Lord has placed in it as His deputy.
 
This book is a fountain that both high and low will be able to quench their thirst by drinking from it. For those who are able to see beneath the evident, there are signs that, if followed, will lead to the Source. For those who see the surface, there are things plain as could be.


New Critical Arabic Edition

We have edited and translted this book with very high standard of shcolarship. More than five manuscripts are employed to establish the Arabic text evidently include all of the best sources listed by Osman Yahia. The best is Corum 756 and Yusuf Aga 4859, Ustaz al-Mansub considered it in the hand writing of Shaykh al-Akbar Ibn al-Arabi. Detail of each of the manuscripts are:

Corum 2001- Corum 756

One of the best manuscript of Tadbirat al-Ilahiyya. If we add the pages of YA 4859 to it then it is a complete copy. In my critical edition most of the variations of this mansucript are more accurate then others. The text is accurate, clear, vivid. There are some corrections in the margins, they are also easy to understand. Headings are wriiten in big and bold font. But this mansucript clearly lacks any detail about the copist or the palce of copy or from which manuscript it has been copied. There is also no samaa or a copying note on entire manuscript in its current form.

Yusuf aga 1452- Yusuf Aga 4859

This is the second part of the work (Corum 756 is the first). From bāb 2/3 of bāb 17 only. Both of these manuscripts are same but they were torn apart for reasons unknown. same desciption applies to it as of Corum 756.



Koprulu 1453- Koprulu 713

One of the best when it comes to the text readability and the diacritcs (Harakat). The text is certainly copied from an original.

The main problem is that at page 22a the text ends at the last page of chapter 8 and on page 22b starts on the second page of chapter 17. That means a total of 8 chapters are not present in its current form i.e. from page no 1a to 29b.

In my critical edition of Tadbirat this manuscript hold the second position in accuracy after Corum and Yusuf Aga.

 

Tadbirat 1454- Fakhr al-din al-Khurasani’s copy

A collection of more than 60 works of Shaykh al-Akbar copied in the year 814 by an admirer of Shaykh al-Akbar Fakhr al-Din Khurasani in Zubaid Yemen. This whole collection is of very importance, some works bear notes of copying from original but overall we have found it to be a good collection of Ibn al-Arabi’s works.

Shahit 145 5- Shehit Ali 1341 

It was copied by "the poor toward [God] the Friend, the Rich beyond need, Abū Riḍā bin Sayyid ʿAlī b. Muḥammad al-Jawnī (or Jawwanī), in the month of Jumāda ākhīr 724H." 

Apparently he wanted to write in the same manner that the author had done (ie four days) and he succeeded.

It is a good copy as the scribe claims: I saw, in the copy which I copied from, that the writer claimed that he had copied it from the handwriting of the author and checked it against it, so I have copied the original.

التدبيرات الإلهية في إصلاح المملكة الإنسانية

الحمد لله الذي تواضع كل شيء لعظمته، والحمد لله الذي ذلّ كل شيء لعزته، والحمد لله الذي خضع كل شيء لملكه، والحمد لله الذي استسلم كل شيء لقدرته، اللهم لك الحمد حمدًا كثيرًا خالدًا مع خلودك، ولك الحمد حمدًا لا منتهى له دون علمك، ولك الحمد حمدًا لا منتهى له دون مشيئتك، ولك الحمد حمدًا لا أجر لقائله إلا رضاك. والصلاة على سر العالم ونكتته، ومطلب العالم وبغيته، السيد الصادق، المدلج إلى ربه الطارق، المخترق به السبع الطرائق سيدنا محمد صلى الله عليه وعلى آله الأطهار، وصحابته الأخيار، الذين عرفوا قدره وأجلوا أمره وعظموه تعظيمًا. ليس شيء أبلغ، في تخليد ذكرى الشيخ الأكبر محيي الدين ابن العربي من إحياء آثاره ونشر كتبه. وقد أخذت مؤسسة ابن العربي إسهامًا منها في ذلك أن تخرج كتاب «التدبيرات الإلهية في إصلاح المملكة الإنسانية». وأخذت تعد العدة لإخراج هذا الكتاب إخراجًا طبقًا لمنهاج التحقيق العلمي.
التعريف بالكتاب:
تم ذكركتاب «التدبيرات الإلهية في إصلاح المملكة الإنسانية» في الفهرس رقم 33 والإجازة رقم 34، و«الفتوحات المكية»1: ص63، ص114، 3: ص262 طبعة القاهرة، و«كتاب عنقاء مغرب» ص4 طبعة القاهرة، و«كتاب مواقع النجوم» ورقة 91 أ مخطوط بايزيد 3750 .
ولقد تكلم الشيخ في مصنفه على جملة من المسائل الإلهية التي لا طالما أبرزها في مصنفه الموسوعي الفتوحات المكية الذي هو موسوعة فكر الشيخ الأكبر ومذهبه، وتحت كل مسألة من تلك المسائل يتكلم عن جملة من أسرار وحِكَم الشرع الشريف، ويمكن إجمال تلك المسائل وعلى حسب ما عنون به الشيخ الأكبر الكتاب في الآتي:
أولًا: مكانة الإنسان وخلافته في الأرض.
ثانيًا: الإنسان هو النسخة المصغرة من العالم الكبير.
ثانيًا: إن الإنسان - الفرد - عبارة عن مملكة قائمة بذاتها، والتي لابد لها من ملك يحكمها، ونظام يسيطر عليها، وأفراد مسئولين يديرون شئونها .
الخلاصة:
تقوم فكرة الكتاب الرئيسية على وضع الإنسان - الفرد - في مقابلة بين العالم من فوقه، وبين الدولة من حوله، في محاولة فريدة من نوعها بين إحداث التطابق بين ثلاثة أطراف: الإنسان والعالم والدولة.
أما بعد:  قال الشيخ الأكبر - قدس الله سره - في سبب تأليفه للكتاب ما نصه:

«كان سبب تأليفنا لهذا الكتاب، أنه لما زرت الشيخ الصالح، أبا محمد الموروري، بمدينة موْرور، وجدت عنده كتاب «سر الأسرار» صنفه الحكيم [أرسطو] لذي القرنين [الإسكندر] لمَّا ضعف عن المشي معه، فقال لي أبو محمد: هذا المؤلف قد نظر في تدبير المملكة الدنيوية، فكنت أريد منك أن تقابله بسياسة المملكة الإنسانية، التي فيها سعادتنا، فأجبته، وأودعت في هذا الكتاب من معاني تدبير الملك أكثر من الذي أودعه الحكيم، وبينت فيه أشياء أغفلها الحكيم في تدبير الملك الكبير، وألفته في دون الأربعة الأيام بمدينة مورور، ويكون جرم كتاب الحكيم في الربع أو الثلث من جرم هذا الكتاب».

ثم يذكر الشيخ الأكبر - قدس الله سره - فائدة هذا الكتاب ما نصه:

«فهذا الكتاب ينتفع به خادم الملوك في خدمته، وصاحب طريق الآخرة في نفسه، وكل يحشر على نيته وقصده» ويعود الشيخ الأكبر في المقدمة ليبين أهمية الكتاب، فيقول: «أمّا بعد: ففيه للخواصّ إشارة لائحة، وللعوامّ طريقة واضحة، وهو لُباب التصوّف وسبيل التعرّف، لحضرة التشرّف والتعطّف، يلهج به الواصل والسَّالك، ويأخذ حظّه منه المَمْلُوك والمالك، يعرب عن حقيقة الإنسان وعلوّ منصبه على سائر الحيوان، وأنّه مختصَر من العالم المحيط، مركّب من كثيف وبسيط، لم يبق في الإمكان شيء إلّا أُودع فيه، في أوّل منشئه ومبانيه، حتّى برز على غاية الكمال، وظهر في البرازخ بين الجلال والجمال، فليس في الجود بخلٌ، ولا في القدرة نقصان، صحّ ذلك عند ذوي العقول الراجحة بالدليل والبرهان، ولهذا قال بعض الأئمّة: «وليس أبدع من هذا العالم في الإمكان».

طباعة الكتاب:
لقد تم طباعة الكتاب أول مرة من مكتبة نيبرج ثم قامت عدة دور نشر طباعة الكتاب وهم مكتبة الثقافة الدينية عام 1998، ودار الكتب العلمية عام 2003. وفي عام 2002 اصدرت مؤسسة الأنتشار العربي رسائل ابن عربي في مجموعة مجلدات تحقيق سعيد عبد الفتاح في ضمنها هذا الكتاب، لم يعرف في مقدمة تحقيقه المخطوطات التي قام عليها عمله.
هذا العمل:
تم تخريج الآيات القرآنية والأحاديث النبوية وجدولة المصطلحات الصوفية والأعلام والأماكن ... الخ. تم عمل المقابلة والتحقيق ليصبح العمل ولله الحمد والمنة هو أصح تحقيق هذا الكتب صدر حتى الآن، وذلك طبقًا لمنهج التحقيق العلمي كما سنبين.
منهج التحقيق:
لقد كان هدفنا الأساسي في التحقيق أن نصل إلى النص الذي كتبه الشيخ الأكبر بدون زيادة او نقصان، ولقد عوّلنا في تحقيق النص على أربعة مخطوطات وذلك لأن الناسخ ربما سقطت منه بعض الكلمات سهوا، وقلما تسقط الكلمة نفسها من كلتا النسختين، فالنسختين الأخرى تتمم ما سقط من النسختين الأولى.
المخطوطات:
مخطوطة يوسف أغا (رمز: ي)
المخطوطة موجودة تحت رقم 4859، 756 وهي نسخة أصلية وناقصة، وبياناتها كالتالي: تقع المخطوطة على جزئين، الجزء الأول موجود في مكتبة شوروم تحت رقم 756 وعدد صفحاتها 94 صفحة. والجزء الثاني موجود في مكتبة يوسف أغا تحت رقم 4859 وعدد صفحاتها 15 صفحة.
19سطرا في الصفحة الواحدة.
من 8- 12 كلمة في السطر الواحد.
العناوين داخل المخطوطة مكتوب بخط سميك.
مقدمة مخطوطة الكتاب"بسم الله الرحمن الرحيم وصلى الله على محمد وآله وسلم تسليما" وبقلم خط سميك "قال العبد الفقير الى رحمة الله" وبقلم عادي"محمد بن علي بن العربي الحاتمي رضي الله عنه".
*نهاية مخطوطة الكتاب "تمّ الكتاب والحمد لله ربّ العالمين، وصلّى الله على سيّدنا محمد خاتم النبيّين، وعلى آله وصحبه أجمعين وسلّم تسليما كثيرا كثيرا كثيرا".
مخطوطة كوبرولو (رمز: ك)
المخطوطة موجودة تحت رقم 713 وعدد صفحاتها 29 صفحة منقول عن أصل وبياناتها كالتالي:
22سطرا في الصفحة الواحدة.
من 12-17 كلمة في السطر الواحد.
العناوين داخل المخطوطة مكتوب بخط سميك.
اسم الناسخ: ابن المروري.
تاريخ النسخ: 663هـ.
مقدمة مخطوطة الكتاب "بسم الله الرحمن الرحيم وصلّى الله على محمد وآله وسلّم تسليماقال العبد الفقير إلى رحمة الله تعالى محمّد بن علي بن العربي الحاتمي رضي الله عنه".
نهاية مخطوطة الكتاب وتاريخ النسخ "والحمد لله رب العالمين وصلّى الله على سيّدنا محمد وآله أجمعين. تم الكتاب على يدي الفقير ابن المروري عفا الله عنه في شهر جمادى الأولى من سنة ثلاث وستين وستمائة وهو ابن خمسين سنة، غفر الله له بمدينة قونية".
مخطوطة شهيد علي ( رمز: ش ).
المخطوطة موجودة تحت رقم 1341/76-120، 723ه منقول عن أصل وعدد صفحاتها 45 صفحة وبياناتها كالتالي:
21سطرا في الصفحة الواحدة.
من 12-17 كلمة في السطر الواحد.
العناوين داخل المخطوطة مكتوب بخط سميك.
اسم الناسخ: أبو الرضا بن سيد علي بن محمد الجويني.
تاريخ النسخ: 724هـ.
مقدمة مخطوطة الكتاب "بسم الله الرحمن الرحيم وصلّى الله على محمد وآله".
نهاية مخطوطة الكتاب وتاريخ النسخ " علّقه الفقير إلى الولي الغني أبو الرضا بن سيد علي بن محمد الجويني في جمادي الآخرة لسنة أربع وعشرين وسبعمائة. وقصدت أن أعلّقه في مثل مدّة تصنيفه تأسّيا بالمصنّف، أعاد الله علينا وعلى جميع المسلمين من بركاته. فاتفق مثل ذلك تقريبا والحمد لله حق حمده، والصلاة والسلام على نبيّه محمد وعبده، بمقام سميساطية دمشق. ثم أقول: رأيت في النسخة المنقولة عنها، أنّه زعم كاتبها نقلَها عن خط المصنف والمقابلة به، فقلّدت الأصل.
وإن وقفتَ على مواضع ما كانت تتمشى إما أترك أي حيز على ما ظننتُ حالة التحرير، ولعل ذلك يزول بالتأمّل على فراغ، وبالله التوفيق تمت المقابلة بمعاونة السيد المكرم منيع ... وفقير المال ... جعفر بن يوسف بن علي الحسيني الشيرازي ... والأخ الصالح جنيد بن عثمان ....أردت بالتأسّي بالمصنف - قدّس الله روحه - تأسّيا بوجه مّا، وإلا تصنيف مثل هذا الكتاب الشامل على الفوائد التي لا تعد ولا تحصى في دون الأربعة أيام، قريب من الإعجاز عند كل صاحب فطنة منصفٍ، وليس بمقدورٍ إلا لمثل هذا الولي المؤيّد من عند الله سبحانه. والسلام على من اتّبع الهدى".
مخطوطة فخر الدين الخرساني (رمز: ف)
33سطرا في الصفحة الواحدة.
من 15-21 كلمة في السطر الواحد.
العناوين داخل المخطوطة مكتوب بخط سميك.
اسم الناسخ: علي بن يحيى الشريف.
تاريخ النسخ: 814هـ.
مقدمة مخطوطة الكتاب "بسم الله الرحمن الرحيم الحمد لله رب العالمين قال العبد الفقير إلى الله تعالى محمّد بن العربي الحاتمي الطائي ثم المرسي عفا الله عنه وعنا به".
نهاية مخطوطة الكتاب وتاريخ النسخ "تم الكتاب بحمد الله وحسن توفيقه والصلاة على سيّدنا محمد وآله وصحبه وسلّم. وكان ذلك برسم السيد الإمام العلامة الفرد الجامع المحقق زين الدين الهروي بلغه الله أماله وختم بالصالحات أعماله. على يد العبد الفقير إلى الله علي بن يحيى الشريف عفا الله عنه وعن والديه آمين آمين وكان فراغه مستهل رجب ... من شهور سنة أربع عشرة وثمان مائة".
وفي النهاية:
أخص بالشكر الباكستاني الأستاذ/ أبرار أحمد شاهي على مجهوداته في عملية المراجعة والمقابلة للكتاب، والذي رافقنا بجد وتعب في طوال عملنا في تحقيق الكتاب. وأخص بالشكر اليمني الأستاذ/ عبد العزيز سلطان المنصوب صاحب أول تحقيق لكتاب الفتوحات المكية والذي حقق الكتاب على مخطوطة قونية والتي هي بخط الشيخ الأكبر، والذي قام بمراجعته النهائية لكتاب «روح القدس في مناصحة النفس» والتي قامت مؤسسة ابن العربي بنشره، ووافر الشكر أيضا على مراجعته النهائية للكتاب. وكان هذا كرامة من الشيخ الأكبر محيي الدين ابن العربي أن يجتمع من في الشرق الأقصى (باكستان) والشرق الأوسط (مصر) وجنوب الجزيرة العربية (اليمن) وإن لم يجتمعوا بإجسادهم ولكن جمعهم روح الشيخ الأكبر لإخراج هذا العمل. وبعد فإني اسأل الله - سبحانه - أن يجعل هذا العمل خالصا لوجهه، وإظهار صحيح المصنفات التي صنفها شيخي وقدوتي وأبي الروحي الشيخ الأكبر محيي الدين ابن العربي - قدس الله سره - والذي نحن على عقيدته ومذهبه . والله يقول الحق وهو يهدي السبيل.

أحمد محمد علی

تدبیرات الہیہ

الحمد لله الذي لا إله إلا هو، والصلاة والسلام على سيدنا محمد وعلى آله وسلم تسليما كثيرا. اما بعد: آج وہ مبارک دن ہے کہ ہم آپ حضرات کی خدمت میں شیخ اکبر محی الدین ابن العربی کی کتاب «التدبیرات الإلهية في إصلاح المميكلة الإنسانية» “اصلاح انسان کی خدائی تدبیریں” تحقیق شدہ عربی متن، سلیس اردو ترجمے اور شیخ البیتامی کی شرح سے منتخب شدہ حواشی کے ساتھ شائع کرنے کی سعادت حاصل کر رہے ہیں۔ اس کتاب کی تالیف کے بارے میں شیخ اکبر فرماتے ہیں:

" ہماری یہ کتاب لکھنے کی وجہ یہ بنی کہ جب میں نے شیخ الصالح ابو محمد الموروری سے شہر مورور میں ملاقات کی تو اُن کے پاس ’’سر الاسرار‘‘ (رازوں کا راز) نامی ایک کتاب دیکھی جو ذوالقرنین کے استاد نے اس وقت لکھی تھی جب وہ اپنے شاگرد کے ساتھ(سفر پر) جانے سے معذور تھا۔ لہذا ابو محمد نے مجھے کہا: اس مولف نے صرف دنیاوی مملکت کی تدبیر میں غور کیا ہے جبکہ میری آپ سے یہ گزارش ہے کہ آپ مملکتِ انسانی کی اُس سیاست سے اِس کا موازنہ کریں جس میں ہماری سعادت ہے۔ لہذا میں نے آپ کی فرمائش قبول کی اور اس کتاب میں (اس باطنی) مملکت کی تدبیر کے ایسے مطالب جمع کیے ہیں جو کہ اُس فلسفی (کے جمع کردہ مطالب) سے بہت زیادہ ہیں۔ میں نے اس میں اُن باتوں کو بھی واضح کیا جو وہ فلسفی اِس بڑی بادشاہت کی تدبیر میں چھوڑ گیا تھا۔ اور یہ سب میں نے شہر مورور میں چار ایام سے بھی کم وقت میں تحریر کیا۔ اُس فلسفی کی کتاب میری اس کتاب کی ضخامت کا ایک تہائی یا ایک چوتھائی ہو گی۔ (میری) اِس کتاب سے بادشاہوں کا خادم ان کی خدمت میں، اور راہِ آخرت کا مسافر اپنے نفس کی اصلاح میں فائدہ اٹھا سکتا ہے۔ ہر ایک کا حشر اس کی نیت اور ارادے کے مطابق ہی ہو گا۔ واللہ المستعان۔

اس سے پہلے یہ کتاب عالمی افق پر متعدد بار شائع ہو چکی ہے۔ اس کا سب سے قدیمی ایڈیشن سن 1919ء میں نائبرگ کی تحقق سے شہر لیڈن میں مطبع برل سے شائع ہوا تھا۔ اس ایڈیشن کی تیاری میں اگرچہ ایک سے زائد مخطوطات سے مدد لی گئی لیکن وہ قدیمی نہ تھے، لہذا متن میں بھی سقم موجود رہا۔ پھر متعدد بار عرب دنیا میں یہ کتاب مختلف اشاعتی اداروں کی جانب سے شائع ہوتی رہی ان میں مکتبہ بحسون 1993ء، مکتبہ الثقافہ الدینیہ 1998ء دار الکتب العلمیہ2004ء اور سعید عبد الفتاح کی تحقیق سے سن 2002ء میں مکتبہ الانتشار سے شائع ہوئی۔ اگرچہ سعید عبد الفتاح نے اس کتاب کی دوبارہ سے تحقیق کی لیکن مسئلہ وہیں کا وہیں تھا؛ یعنی یہ مخطوطات قدیمی نہ تھے۔ لہذا ایک حتمی اور مستند متن کی تیاری کی ضرورت محسوس کی جا رہی تھی جس کا اظہار محترمہ جین کلارک نے ہمارے ساتھ خط و کتابت میں بارہا کیا۔
اسی طرح اس کتاب کے مختلف زبانوں میں متعدد تراجم بھی ہوئے۔ 1973 ء میں اسے سب سے پہلے ترکی زبان میں ترجمہ کیا گیا جو استنبول سے شائع ہوا۔ پھر سن 1992 میں مصطفی طاہر علی کا کیا گیا ترکی ترجمہ استنبول سے شائع ہوا۔ 1997ء میں شیخ طوسن بیرک الجریری الخلوتی نے اس کے عربی مفاہیم کو انگریزی میں نقل کیا۔
منہج تحقیق و ترجمہ
اسے حسن اتفاق کہیے یا امداد غیبی کہ خوش قسمتی سے ہمیں اس کتاب کا وہ نسخہ میسر آ گیا جس کے بعد ہمارے لیے اس کتاب پر کام کرنا بہت ہی آسان ہو گیا اور یہ مصنف کے ہاتھ سے لکھا نسخہ یوسف آغا + چوروم ہی ہے۔ مغربی خط میں لکھا یہ نسخہ نہایت ہی واضح ہے جس کو پڑھنا نہایت آسان ہے۔ اس طرح لگتا ہے جیسے شیخ اکبر نے الفاظ کو دھاگوں میں پرویا ہے، یوں اس نسخے میں عبارت کا حسن نمایاں ہے۔ اس نسخے کی دستیابی کے بعد ہمیں زیادہ مسائل کا سامنا نہیں کرنا پڑا کیونکہ اب ہمارے پاس ایک ایسا روشن معیار موجود تھا جس پر ہم باقی نسخوں کو پرکھ سکتے تھے۔
یوں اللہ تعالی کے فضل و کرم سے ہم اس کتاب کی بنیاد بننے والے عربی متن کو ترتیب دینے میں کامیاب ہو ئے اور یہ متن کافی حد تک قابل اطمینان تھا۔ اب دوسرے مرحلے میں اس عربی متن کا دیگر تین یا چار نسخوں سے موازنہ کیا جا نا تھا۔ ایک ایک لفظ کو چاروں نسخوں میں دیکھا گیا، کمی یا زیادتی کو حاشیے میں لکھا گیا اور اشکالات اور ابہامات کا ازالہ کیا گیا۔ یہ سارا عمل نہایت ہی صبر آزما اور تکلیف دہ تھا۔ لیکن اُس پاک ذات کی توفیق اور غیبی امداد سے ہم نے یہ مرحلہ بھی خوش اسلوبی سے طے کیا۔ اب عبارت کو آخری اور حتمی شکل دینے کے لیے ہمارے پاس اس کے سوا کوئی چارہ نہ تھا کہ ہم اسے شیخ عبد العزیز المنصوب کے پاس یمن روانہ کریں اور وہ اس کی نوک پلک سنواریں، اعراب اور علامات وقف کو چیک کریں اور آخری حتمی قابل اشاعت عبارت ہمارے سپرد کریں۔ اللہ کے کرنے سے یہ مرحلہ بھی نہایت خوبی سے سرانجام پایا۔ اب ہم پورے وثوق سے یہ کہہ سکتے ہیں کہ روئے زمین پر شائع شدہ حالت میں یہی اس کتاب کا بہترین متن ہے۔ اور یہ ہمارے لیے ایک اعزاز کی بات ہے کہ شیخ اکبر ابن العربی کے علوم کی ترویج میں ابن العربی فاونڈیشن بین الاقوامی اداروں سے کسی طرح بھی پیچھے نہیں۔ اس سلسلے میں ہم اپنے تمام قارئین کو بھی مبارک باد پیش کرتے ہیں۔ اب ذرا اردو ترجمے کی بات ہو جائے، ا س کتاب کا اردو ترجمہ سن 2008ء میں شائع ہو چکا تھا لیکن جیسا کہ میں نے پہلے عرض کیا وہ ان شائع شدہ متون پر بھروسا کر کے کیا گیا تھا اور وہ ترجمہ اس مستند عبارت کے مطابق نہ تھا۔ لہذا یہ طے پایا کہ کتاب کاترجمہ الف سے ی تک مکمل چیک کیا جائے گا، صرف یہ نہیں کہ جہاں عبارت تبدیل ہو وہاں سے اسے تبدیل کر لیا جائے۔ اس کا بنیادی مقصد تو یہی تھا کہ اغلاط کو کم سے کم کیا جائے، ترجمے کو مزید سلیس بنایا جائے،چونکہ یہ ترجمہ پرانے متن سے کیا گیا تھا لہذا اس کو نئے متن سے ہم آہنگ کرنے کے لیے مکمل نظرثانی کی گئی۔
“اصلاح نفس کا آئینہ حق” کے بعد اِس کتاب میں بھی یہ خصوصیت رکھی گئی ہے کہ ترجمے میں اسلوب شیخ کی پیروی کی گئی ہے؛ مثلا نص میں جہاں آپ نے مسجع و مقفیٰ رنگ دیا ہے ترجمے میں بھی وہ رنگ دکھانے کی کوشش کی گئی ہے۔ جہاں آپ حقائق کی بات کرتے ہوئے واضح کلام کرتے ہیں وہاں ترجمے میں بھی وضاحت کو اولین ترجیح دی گئی ہے۔ جہاں آپ نے عربی روز مرہ اور محاورے کااستعمال کیا ہے ترجمے میں اردو روز مرہ اور محاورہ استعمال کیا گیا ہے۔ غرض اپنی طرف سے پوری کوشش کی گئی ہے کہ ترجمہ بھی اسلوبِ شیخ سے ہٹنے نہ پائے۔
پھر اس ترجمے کی ایک اور خصوصیت کا ذکر کرنا چاہوں گاکہ ترجمے میں موجود ہر لفظ اردو زبان کی معیاری کتب لغت سے تصدیق شدہ ہے۔ آپ کو اس ترجمے میں استعمال شدہ % 99 فیصد الفاظ کے مطلب لغت کی کتابوں میں مل جائیں گےجس کا فائدہ یقینا عام قارئین کو ہو گا۔ پہلے شیخ اکبر کے تراجم پر یہ اعتراض ہوتا تھا کہ ان میں موجود اردو الفاظ لغت کی کتابوں میں بھی نہیں ملتے تو عبارت کا مطلب کہاں سمجھ آئے گا لیکن ہماری اس کتاب میں ہر لفظ کو مستند کتب لغت سے تصدیق کے بعد شامل کیا گیا ہے۔ 

اشاعتی معیار

ہم نے اس عبارت کو اشاعت کے بنیادی اصولوں سے مزین کر کے شائع کیا ہے جو کہ مندرجہ ذیل ہیں:
1. عربی عبارت میں موجود تمام قرآنی آیات کی تخریج کی گئی ہے۔
2. کتاب میں موجود احادیث نبویہؐ کی کتب احادیث سے تخریج کی گئی ہے۔
3. کتاب کی عربی اور اردو دو فہرستیں مرتب کی گئی ہیں تاکہ وہ حضرات جو اردو نہیں جانتے اور عربی متن تک رسائی حاصل کرنا چاہتے ہیں ان کے لیے آسانی ہو۔
4. خوش قسمتی یوں بھی ہمارے شامل حال رہی کہ اس کتاب پر دوبارہ کام کے دوران اس کی ایک نہایت ہی مستند شرح ہمارے ہاتھ لگی۔ یہ شرح شیخ عبد الغنی النابلسی  کے شاگرد شیخ البیتامی نے لکھی ہے جو کہ متن کتاب سے دو گنا ضخیم ہے۔ شرح نے ہماری مدد اس طرح سے کی کہ جن مشکل مقامات پر حواشی کی ضرورت تھی وہ حواشی ہم نے اسی شرح سے اخذ کر لیے۔ ان حواشی کو لکھنے میں صرف وہی عبارات اخذ کی گئی ہیں جن کو اصل متن کی شرح محسوس کیا گیا ہے، عبارتی تسلسل کو زیادہ اہمیت نہیں دی گئی مگر یہ کوشش کی گئی ہے کہ یہ عبارت بھی اپنے اصل سیاق و سباق سے نہ ہٹنے پائے۔
5. کتاب کا ترجمہ نہایت سلیس رکھا گیا ہے اور ہر مشکل عربی لفظ کے مقابل اردو لفظ لانے کی کوشش کی گئی ہے الاّ یہ کہ وہ شیخ اکبر کی اصطلاح ہو۔ اردو ترجمے میں مفاہیم کی روانی اور سلاست پر توجہ دی گئی ہے لیکن بعض ناگزیر وجوہات کی بنا پر مکمل ترجمہ کماحقہ کرنا ناممکن ہے۔ عربی متن ساتھ پیش کرنے کا بنیادی مقصد بھی یہی ہے کہ کلام سے دلیل پکڑنے کی غرض سے اصل عربی سے رجوع کیا جائے اور ترجمے کو صرف فہم کا ایک ذریعہ سمجھا جائے، بلکہ جو حضرات عربی پڑھنے اور سمجھنے کی صلاحیت رکھتے ہوں انہیں عربی متن ہی پڑھنا چاہیے۔
6. علوم شیخ اکبر کے ترجمے کا حق ادا کرنا تو کسی کے بس کی بات نہیں، اور نہ ہی ہمارا یہ دعوی ہے۔ ہم نے اپنی سی کوشش کی ہے کہ ترجمہ شیخ اکبر کی عمومی فہم کے مطابق سلیس اور آسان ہو، لیکن اگر کسی مقام پر ہم عربی متن اور ترجمے کو شیخ اکبر محی الدین ابن العربی  کی مراد کے مطابق پیش نہیں کر سکے تو ہم ان سے معافی کے خواستگار ہیں۔
7. کتاب کو بڑے سائز پر بہترین صورت میں شائع کیا جا رہا ہے۔ اشاعت کتاب کے سلسلے میں بین الاقوامی معیار کو سامنے رکھا گیا ہے۔
ہم بارہا اس مبارک عزم کا اظہار کر چکے ہیں کہ جدید ترین مناہج کو بروئے کار لا کر ابن العربی فاؤنڈیشن سے چھپنے والی ہر نئی کتاب کو تحقیق شدہ عربی متن اور سلیس اردو ترجمے کے ساتھ شائع کیا جائے گا۔ آج ہمیں خوشی ہے کہ اس پاک ذات نے ہمیں اپنے عزم پر عمل پیرا ہونے کی توفیق دی، بیشک محض اس کی توفیق اور عطا سے ہی ہم اس منزل کو پانے میں کامیاب ہوئے ہیں۔ اور اگر ہمیں اپنے مرشد کی صحبت نصیب نہ ہوتی تو اس ذات تک پہنچنا بھی ممکن نہ تھا۔اللہ سے دعا ہے کہ ہمیں ہماری نیتیں ٹھیک رکھنے کی توفیق عطا فرمائے اور ہمارے دلوں کو ٹیڑھا ہونے سے بچائے۔ یااللہ تو جانتا ہے کہ ہمارے اس عمل میں بنیادی مقصد تیری رضا کا حصول اور لوگوں تک حق بات کا پہنچا دینا ہے اس لیے ہمارے اس حقیر سے عمل کو اپنی بارگاہ میں شرف قبولیت بخش اور ہمیں آئندہ بھی ان اعمال صالحہ کی توفیق دے جو ہمارے لیے تیری طرف سے قبولیت کی نشانی ہوں۔

Who are we

Spiritual guiding force behind all of the Foundation's activities. He is a practicing Shaykh with thousands of murids and Astana at Rawalpindi. 

Syed Rafaqat Hussain Shah
Murshid Kareem

Editor and Translator of more than 25 Books and Rasail's of Shaykh al-Akbar Ibn al-Arabi. Working full time for this cause. 

Abrar Ahmed Shahi
Head of Ibn al-Arabi Foundation

Contributing part time on Foundation's activities, Proof reader and Urdu language editor of all the published works. 

Hamesh Gul Malik
Secretary General.