JoomlaLock.com All4Share.net

Author: Shaykh al-Akbar Muhyiddin Ibn al-Arabi

Editor: Abrar Ahmed Shahī, Abd al-Aziz Sultan al-Mansub, 

Translated by: Abrar Ahmed Shahi

Price Rs 999/- Int'l US $ 45.

Pages: 432

ISBN: 9789699305078

Dimensions: 255 × 165 mm

Edition: 1st. 2014

Made possible with a grant from Mrs Ali Gohar

In stock

Read online and Purchase

Muhyiddin Ibn al-'Arabi's Kashf al-Ma'na' has been composed in the East at Abu Hamid al-Ghazzali's northern corner in the Mosque of Damascus in 621/1224, as we can infer from the conclusion of the book. In this book each of the ninety-nine names of God have been divided into three subsection, it follows a programatic work following a uniform pattern thourghout. Each name was treated in the modes of three key concepts:

1- ta'alluq (dependence)

that is your absolute dependence upon this name, in the sense where it indicate towards the essence. 

2- tahaqquq (realization)

the gnosis of the more epistemic realization of its meaning, both as to God and man;

3- takhalluq (assimilation)

the adoption of this Divine name which is appropriate for you, as the Essense is associated with it which is appropriate to it. 

New Critical Arabic Edition

We have edited and translted this book with very high standard of shcolarship. . The five manuscripts employed to establish the Arabic text evidently include all of the best sources listed by Osman Yahia (Histoire et classification, r.g. no. 338) the earliest (MS Ulu Cami 1581) dating from the late-8th/14th century. it also suggests that the work was simply dictated extemporaneously (to one Sharaf al-Din Abu Muhammad 'Abd al-Wahid b. Abi Bakr of Hama in Syria) at sessions in Imam al-Ghazzali's zawiyah during the fast of Ramadan in the year 621 AH . Detail of the manuscripts are:

Ulucami 1451- Ulu Cami 1581

A very clear copy, with strong black headings for each Name and its 3 sections of taʿalluq, taḥaqquq and takhalluq. On 140b/141a there is copy of a note by IA about the composition of the work; viz, that it was based upon the work of al-Ghazālī and written in Ramaḍān 621H for a disciple, Sharafuddīn Abū Muḥammad ʿAbd al-Wāḥid b. Abū Bakr b. Sulaymān al-Ḥamawī. It is not directly stated that this copy was made from the original, but it seems likely.

Fatih 1452- Fatih 5298

Dated 6 Ramaḍan 783H on 81b. The earliest copy of the text. No provenance given, but from a good collection which contains two texts taken from originals held in Aleppo (in the possession of Shaykh Badr Muḥammad al-Zāhidī; see al-Fanārī’s copies, Beyazit 3750)

Yeni Cami 1453-Yeni Cami 705

I consider it to be a good copy, with each chapter heading in red. In the end we find that this manuscript was copied in Ramadan 865 AH. 

Khurasni 1454- Fakhr al-din al-Khurasani’s copy

A collection of more than 60 works of Shaykh al-Akbar copied in the year 814 by an admirer of Shaykh al-Akbar Fakhr al-Din Khurasani in Zubaid Yemen. This whole collection is of very importance, some works bear notes of copying from original but overall we have found it to be a good collection of Ibn al-Arabi’s works.

Majlis 145 5- Majlis e Shoora Milli Iran 

No date and place of copy mentioned in this manuscript. In our comparision we have not found it to be an accurate copy of the text. There are mistakes and word skippings in many place. we have only included it for verification. 

 

Pablo 1456- Published Edition by Pablo Beneito, Murcia 1996. 

The text has been checked and verified from this beautiful editon by Pablo Beneito. for further detail about this edition see this review by Gerald Elmore. (Book Reviews: Las Contemplaciones de los misterios; Commentaries on Meister Eckhart Sermons; Ibn 'Arabi in the Later Islamic Tradition; The Unlimited Mercifier; El Secreto de los nombres de Dios; Le Livre des chatons des sagesses)

قراءة في كتاب: كشف المعنى عن سر أسماء الله الحسنى

ذكر الشيخ الأكبر لهذا الكتاب الذي بين أيدينا عنوانين اثنين؛ أوّلهما "كشف المعنى عن سر أسماء الله الحسنى" وجاء ذكر ذلك في كتاب التدبيرات الإلهية، والآخر "شرح الأسماء الحسنى" وفق الفتوحات المكية وهذا الحال انعكس على مخطوطاته، ومنها المخطوطات التي اعتمدنا عليها في التحقيق، فحملت كل منها واحدا من هذين الاسمين .

أنجز تأليف الكتاب في رمضان سنة 621هـ بجامع دمشق، كما جاء في النسخة الأصلية للكتاب وذكرته النسخة "ج" التي نقلت منها مباشرة. وكان المفهوم السابق أنّ هذا الكتاب هو من مؤلفات الشيخ الأكبر في الفترة المغربية التي تسبق عام 599هـ. سبب ذلك الاعتقاد كونه ذكر في كتاب التدبيرات الإلهية الذي تم تأليفه بالأندلس قبل هذا التاريخ الأخير بأعوام بعبارة هي: وقد ذكرنا معنى التخلّق بالأسماء الربّانية في كتابنا المترجم «بكشف المعنى عن سرّ أسماء الله الحسنى». إلا أنه أمام صراحة القول بتأليفه عام 621هـ، الذي له الحجية الأقوى بلا شك، لنا أن نتوقع أنّ الشيخ كان قد أضاف هذه العبارة المختصرة في كتاب التدبيرات الإلهية في وقت متأخر بقصد التنويه لا أكثر. أهميّة هذا الكتاب تبدو من كون محتواه يناقش واحدة من أهم قواعد المعرفة الصوفية، وهي التي خصص لها شيخنا، فيما بعد، الباب 558 في موسوعته الكبرى الفتوحات المكية، وشرحها بتوسع استغرق السفرين 32، 33 لأهميّتها.

فالأسماء الإلهيّة "هي المؤثّرة في هذا العالَم، وهي المفاتح الأُوَل التي لا يعلمها إلّا هو" ، وهي أخلاق الله، كما "أنّ الله لا يُعقل إلها إلّا من حيث أسمائه الحسنى، لا من حيث هو مُعَرّى عن هذه الأسماء الحسنى؛ فلا بدّ من توحيد عينِه، وكثرة أسمائه، وبالمجموع هو الإله". ومعرفة أسماء الله الحسنى ستقودنا إلى معرفة أنّ الله خلق "الإنسانَ الكامل على صورته، ومكّنه، بالصورة، من إطلاق جميع أسمائه عليه: فردا فردا، أو بعضا بعضا. لا ينطلق عليه مجموع الأسماء معًا في الكلمة الواحدة؛ ليتميّز الربُّ من العبد الكامل. فما من اسم من الأسماء الحسنى، وكلّ أسماء الله حسنى، إلّا وللعبد الكامل أن يُدْعَى بها، كما لَه أن يدعو سَيِّدَهُ بها". وهو ما يسمّى بالتخلق بأخلاق الله وفق التوجيه الحكيم: "تخلقوا بأخلاق الله". لينتهي إلى توجيه محبّيه بقوله: "فاحفظ - يا وليّ - نفسك في التخلّق بأسماء الله الحسنى، فإنّ العلماء لم يختلفوا في التخلّق بها" ، "فالتخلّق بأخلاق الله هو التصوّف" .

وفي الأخير، يلفت نظرنا أمر مهم، فعلى الرغم من تبحر المؤلف وسعة علمه وحديثه الموسوعي في علوم التصوف بجوانبها المتشعبة كما لم يُسبق في هذا الاقتدار، فإنّا نجده لا يتردد في القول بعدم العلم إن وجد الأمر كذلك، وهي قضية قلّما يعترف بها فطاحل العلماء. وقصدنا هنا تلك العبارة التي وردت في بداية الكتاب عن عدد الأسماء الحسنى، إذ قال: "وهي تسعة وتسعون كما صحّ في الخبر، ولكن ما وصل إلينا تعيينها على الجملة من طريق نعتمد عليه" وكان يمكنه تجاهل هذه الإضافة الأخيرة لولا إحساسه القوي بمسئولية الكلمة واستشعاره لأهمية وضوح الأمر له ولقرائه حتى يكون صادقا مع نفسه ومعهم. ولذلك نجده يوضح في نهاية الكتاب أنه شرح هذه الأسماء التي اقتصر فيها على ما خرجه الإمام الغزالي في كتابه "المقصد الأسنى"، لنفهم من كلامه أنّ هذا الحصر لا يعبر بالضرورة عن رؤيته وقناعته الخاصة.

انعكس هذا الأمر على قراءة الشيخ الأكبر للأسماء الحسنى في الباب 558 من الفتوحات المكية فيما بعد تأليف كتاب "كشف المعنى"، فقد لاحظنا أنه استبعد عشرة من الأسماء التي وردت هنا، وهي: الشهيد، الماجد، البر، المنتقم، مالك الملك، ذو الجلال والإكرام، المتعالي، المقسط، الباقي، الرشيد. كما أنه دمج اسمين في حضرة واحدة في كل من: الرحمن الرحيم، الغفار والغفور، الغني والمغني، والمقتدر والقادر. فكأنه أنقص 14 اسما ليصير العدد الباقي 85 اسما. ثم أضاف 15 اسما أو حضرة فتمم العدد مائة، وحضرات الأسماء المضافة هي: حضرة الرب، وحضرة الحياء، وحضرة السخاء، وحضرة الطيّب، وحضرة الإحسان، وحضرة الدهر، وحضرة الصحبة (المعيّة)، وحضرة الخلافة، وحضرة الجمال، وحضرة التسعير، وحضرة القربة، وحضرة المعطي، وحضرة الشافي، وحضرة الإفراد، وحضرة الرفق. وكان قد ذكر في الباب 177 من الفتوحات المكية أنّ غاية ما وصل إليه الحافظ ابن حزم من إحصاء الأسماء الحسنى هو 83 اسما استخرجها من نصّ القرآن وممّا صحّ عن النبي - صلّى الله عليه وسلّم - وبمقارنتها مع الأسماء التي وردت في هذا الكتاب نجدها تتفق مع 60 اسما منها، وتختلف مع 23 اسما لم ترد هنا .

عبد العزيز سلطان المنصوب

کشف المعنی (اسمائے الہیہ کے اسرار و معانی)؛ ایک تعارف

اللہ تعالی فرماتا ہے: ﴿وَلِلَّـهِ الْأَسْمَاءُ الْحُسْنَى فَادْعُوهُ بِهَا﴾[الأعراف: 180] بیشک اللہ کے خوبصورت نام ہیں سو اِن ناموں سے اُسے پکارو، اور فرمایا: ﴿قُلِ ادْعُوا اللَّـهَ أَوِ ادْعُوا الرَّحْمَـٰنَ أَيًّا مَّا تَدْعُوا فَلَهُ الْأَسْمَاءُ الْحُسْنَى﴾ (الإسراء: 17) چاہے اللہ کے نام سے پکارو یا الرحمن کے نام سے پکارو، اُسے جس نام سے پکارو تو اُس کے سب نام اچھے ہیں۔ بقول شیخ یہ اسما "اسما کے اسما" ہیں، کائنات کی ابتدا ہیں اور نسبتوں کی جا ہیں۔ یہ جامعیت کی نسبت سے ذات پر دلالت کرتے ہیں لیکن انفرادی طور پر ہر اسم کا مفہوم جدا ہے۔ بقول شیخ یہی اسما اعیان کائنات ہیں کہ جب حق نے ان اسما کے اعیان کو دیکھنا چاہے تو کائنات کو ایجاد کیا۔ پھر کائنات میں ان کا اثر یوں ہے کہ ہر بندہ اسم الہی کے ظہور کی جا ہے، اور انہی اسما میں سے کوئی اسم اس کے حال پر حاکم ہے۔ 

انہی اسما سے تعلق، تحقق اور تخلق کا ہمیں حکم ہے:

اسم سے تعلق؛ یہ اِس حیثیت سے تیرا اِن اسما کا مطلق محتاج ہونا ہے جس (حیثیت) سے یہ ذات پر دلالت کرتے ہیں۔

اسم سے تحقق؛  تحقق حق تعالیٰ کے لحاظ سے اور خود تیرے لحاظ سے اِن کے حقیقی معانی کا جاننا ہے۔

اسم سے تخلق؛ جبکہ تخلق یہ ہے کہ تو ان سے ویسے قائم ہو جو تیرے لائق ہے، جیسا کہ یہ (اسما) اُس پاک ذات سے ویسے منسوب کیے جاتے ہیں جیسا اُس کے شایان شان ہے۔

کتاب املائی انداز میں لکھوائی گئی ہے اور مختصر انداز میں حقائق کی طرف اشارات کیے گئے ہیں۔  اب بغیر کسی سابق فہم کے ان اشارات کو سمجھنا ممکن نہیں۔ اگر قاری اسمائے حسنی اور کائنات پر اِن کے اثرات سے ناواقف ہے تو وہ اِن اسما کے حقائق سے بھی شناسا نہیں، اور جو اسما کے حقائق نہیں جانتا وہ انہیں سمجھ بھی نہیں سکتا، اپنانا تو دور کی بات ہے۔ 

  عربی متن کی تدوین اور اردو ترجمہ

ہمیں جب کتاب کا عربی متن میسر آیا تو یہ ہسپانوی محقق پابلو بانیٹو کا تحقیق شدہ ایڈیشن تھا جو انہوں نے ایک سے زائد عربی مخطوطات سے اخذ کیا تھا۔ ابتدائی طور پر دیکھنے سے ہمیں یہ متن کافی حد تک بہتر معلوم ہوا اور لگا کہ اب اس متن کی دوبارہ سے تحقیق کی ضرورت نہیں کیونکہ پابلو بانیٹو نے اسے کافی بہتر انداز میں پیش کیا تھا اور یہ آپ کا ہسپانوی زبان میںphd کا تھیسس تھا۔ لیکن جب ہم نے اللہ کا نام لے کر ترجمہ شروع کیا تو ہمیں متن میں منہج کا فرق نظر آیا جس کو استعمال میں لا کر کوئی محقق تدوین کا کام کرتا ہے۔ اس متن میں ہمیں یہ بات نمایاں نظر آئی کہ محقق نے ہر مخطوط کے ہر لفظ کو اصل عبارت میں لکھ رکھا ہے۔ یہ منہج ہمارے منہج تحقیق سے جدا تھا؛ کیونکہ ہم مخطوطات کی درجہ بندی کے بعد صرف اسی مخطوط کو اصل متن میں لکھتے ہیں جس کی نسبت حتمی ہو اور جس میں غلطی کی گنجائش کم ہو۔ اگر کہیں کہیں اس مخطوط سے انحراف بھی کرنا پڑے تو ہر طرح کا یقین کر لینے کے بعد ہی ایسا ہو۔ اس وقت میرے پاس اس کتاب کے دو مخطوط موجود تھے، لہذا ہم نے دوبارہ سے مکمل عربی متن چیک کرنے کی ٹھانی۔ یہ بات واضح رہے کہ مخطوطات کا انتخاب ہی کسی متن میں سب سے اہم کام ہوتا ہے، چونکہ ہمارے پاس وہ مخطوطات بھی تھے جو پابلو بانیٹو کے پاس نہ تھے لہذا متن میں فرق کا ظاہر ہونا عام بات تھی۔ اب ہم نے تہیہ کیا کہ اس کتاب کا ایک نیا متن مدون کیا جائے تاکہ عربی متن کو بھی ان قدیمی مخطوطات سے ہم آہنگ کیا جا سکے۔ ہم نے ابن عربی سوسائٹی کی لائبرین محترمہ جین کلارک کو اپنے ارادے سے آگاہ کیا، انہوں نے ہماری طلب پر لبیک کہا اور ہمیں مزید تین مخطوطات ارسال کر دئیے۔ کتاب کا عربی مسودہ تیار ہوا اور نظر ثانی، تصحیح اور تحقیق کے لیے مخطوطات کے ساتھ استاذ عبد العزیز منصوب کو یمن روانہ کر دیا گیا۔ آپ نے انتہائی کم وقت میں اپنی ٹیم کے ہمراہ اس کو مکمل چیک کیا اور حتمی متن تیار کر کے ہمارے حوالے کیا۔
عربی متن کو نئے سرے سے مرتب کر لینے کے بعد بھی کتاب آسان معلوم نہ ہوتی تھی۔ اس کے بعد اردو ترجمے کو دوبارہ عربی متن سے ملا کر چیک کیا گیا اور جس جس مقام پر غلطی نظر آئی اسے ٹھیک کیا گیا، شرح میں بھی مشکل مقامات مزید آسان کیے گئے۔ جو عربی عبارات پھر بھی سمجھ سے بالاتر رہیں انہیں عبد العزیز المنصوب کو بھیجا گیا تاکہ وہ ان مقامات کی شرح کر دیں اور ہم اِسے سمجھ کر آسان زبان میں ترجمہ کر لیں۔ اس محبت اور محنت کے باوجود بھی اگر کوئی کمی یا کوتاہی رہ گئی ہو، یا ہم نے عربی متن ویسے پیش نہ کیا ہو جیسا کہ شیخ کی مراد تھی تو ہم ان سے معافی کے خواستگار ہیں۔ قارئین سے بھی یہ گزارش ہے کہ وہ اگر کہیں لفظی یا معنوی غلطی پائیں تو ہمیں آگاہ کریں تاکہ اگلے ایڈیشن میں اسے ٹھیک کر دیا جائے۔

حواشی

مسودہ مکمل ہونے کے بعد ہمیں لگا کہ اس کتاب کو شرح کے بغیر سمجھنا تو ممکن ہی نہیں۔ یوں ہم نے شرح اور حاشیہ بندی کی ٹھانی، اس سلسلے میں شیخ اکبر کی ہی دیگر کتب سے مدد لی گئی۔ خاص طور پر فتوحات مکیہ کیونکہ شیخ اکبر نے اس کے باب نمبر 558 میں حاضرات اسما کافی تفصیل سے ذکر کیے ہیں۔ چنانچہ اس باب سے ہمیں کافی مدد ملی، ہم نے اس کتاب کے مشکل مفاہیم کو سامنے رکھا اور پھر موضوع کی مناسبت سے جو کچھ ہمیں اللہ کی توفیق سے سمجھ آیا اُسے حاشیے میں نقل کر دیا۔ اس عمل کا بنیادی مقصد یہی تھا کہ وہ لوگ – جن میں ہم بھی شامل ہیں – جو ان مفاہیم سے واقف نہیں وہ کسی حد تک ان سے واقف ہو جائیں اور اُن پر اِن کا سمجھنا آسان ہو، حالانکہ نہ یہ مفاہیم آسان ہیں اور نہ ہی وہ انداز جس میں انہیں بیان کیا گیا ہے۔

اشاعتی معیار

ہم آپ حضرات کو یہ یقین دہانی بھی کروانا چاہتے ہیں کہ آپ کے ہاتھوں میں موجود یہ ایڈیشن اس وقت روئے زمین پر اِس کتاب کا بہترین؛ قدیمی مخطوطات سے اخذ شدہ مستند ترین اور مصدقہ ایڈیشن ہے۔ ہم نے عبارت کو اشاعت کے بنیادی اصولوں سے مزین کر کے شائع کیا ہے جو کہ مندرجہ ذیل ہیں:
1. عربی عبارت میں موجود تمام قرآنی آیات کی تخریج کی گئی ہے۔
2. کتاب کا مکمل عربی متن دیا گیا ہے تاکہ وہ حضرات جو اردو نہیں جانتے اور عربی متن تک رسائی حاصل کرنا چاہتے ہیں اُن کے لیے آسانی ہو۔
3. کتاب کا ترجمہ نہایت سلیس رکھا گیا ہے اور ہر مشکل عربی لفظ کے مقابل اردو لفظ لانے کی کوشش کی گئی ہے، الاّ یہ کہ وہ شیخ اکبر کی اصطلاح ہو۔ اردو ترجمے میں مفاہیم کی روانی اور سلاست پر توجہ دی گئی ہے لیکن بعض ناگزیر وجوہات کی بنا پر مکمل ترجمہ کماحقہ کرنا ممکن نہیں۔ عربی متن ساتھ پیش کرنے کا بنیادی مقصد بھی یہی ہے کہ دلیل پکڑنے کی غرض سے اصل عربی سے رجوع کیا جائے اور ترجمے کو صرف فہم کا ایک ذریعہ سمجھا جائے، بلکہ جو حضرات عربی پڑھنے اور سمجھنے کی صلاحیت رکھتے ہوں انہیں عربی متن ہی پڑھنا چاہیے۔
4. علوم شیخ اکبر کے ترجمے کا حق ادا کرنا تو کسی کے بس کی بات نہیں، ہم نے اپنی سی کوشش کی ہے کہ ترجمہ علوم شیخ اکبر کی عمومی فہم کے مطابق سلیس اور آسان ہو لیکن اگر کسی مقام پر ہم عربی متن اور ترجمے کو شیخ اکبر محی الدین ابن العربی – رحمہ اللہ – کی مراد کے مطابق پیش نہیں کر سکے تو ہم آپ سے معافی کے خواستگار ہیں۔
5. کتاب کو بڑے سائز پر بہترین صورت میں شائع کیا گیا ہے۔ اشاعتِ کتاب کے سلسلے میں بین الاقوامی معیار کو سامنے رکھا گیا ہے۔

Who are we

Spiritual force behind the Foundation's activities here in Pakistan. Our Shaykh in Qadari Tariqa

Syed Rafaqat Hussain Shah
Shaykh of Qadari Razzaqi tariqa
Ahmed

Shaykh of Tariqa al Akbariiya, our mentor in correct understanding of the Shaykh's teachings.

Shaykh Ahmed Muhammad Ali
Shaykh of Akbariyya Tariqa

Editor, Translator and Ambassador of Shaykh al Akbar. Working full time in the foundation

Abrar Ahmed Shahi
Head at Ibn al Arabi Foundation Pakistan

Proof reader and Urdu language editor, contributing part time on Foundation's activities

Hamesh Gul Malik
Secretary General.